مانسہرہ،3بچے نمونیا سے جاں بحق ہلاکتوں میں اضافہ کا خدشہ

سردی کی شدت میں اضافہ کے باعث سینکڑوں بچے نمونیا کا شکار۔ بالا کوٹ سرن ویلی اور ڈہوڈیال سے تین بچوں کی نمونیا سے ہلاکت کی تصدیق،ہلاکتوں میں اضافہ کا خدشہ ہے ۔ڈی ایچ او آفس اور کنگ عبداللہ ہسپتال انتظامیہ میڈیا کو معلومات دینے سے گریزاں، عوام نے ہسپتالوں میں ہنگامی انتظامات کا مطالبہ کر دیا، اس سلسلے میں ملنے والی مزید تفصیل کے مطابق ضلع مانسہرہ میں حالیہ بارشوں برفباری اور سردی کی لہر کے باعث جہاں دیگر مشکلات و نقصانات کا سامنا ہے وہا ں سردی کے باعث سینکڑوں چھوٹے بچے نمونیا کی مرض کا شکار ہو گئے ہیں ، ڈہوڈیال دھڑمنگ کے رہائشی ناصر خان کی ایک سالہ بچی عربہ ، بالاکوٹ نڑاہ کے رہائشی عبدالسلام کا ڈیڑھ ماہ کا بچہ اذان علی اور سرن ویلی جبڑ دیولی میں محمد یاسین کا تین سالہ بچہ نمونیا سے جاں بحق ہوئے ہیں ، جبکہ ان علاقوں میں بیسیوں اور ضلع بھر میں سینکڑوں بچے نمونیا کا شکار ہیں، جبکہ گذشتہ ہفتہ میں نمونیا سے جاں بحق بچوں کی تعداد کہیں زیادہ ہے ، جس کا ڈیٹا کسی سرکاری تنظیم کے پاس نہیں ہے جبکہ جبکہ ہسپتالوں تک پہنچائے جانے والے یا جاں بحق ہونے والے بچوں کی تعداد کے بارے بھی ڈی ایچ او آفس اور کنگ عبد اللہ ہسپتال کا عملہ معلومات دینے سے گریزاں ہے،عوامی حلقوں کے مطابق ہسپتالوں میں نمونیا کے علاج کے لیے کوئی خاطر خوا انتظامات نہیں کیے گئے اور نہ عملے کی جانب سے بھی مریضوں کو توجہ دی جا رہی ہے، جس کی وجہ سے سردی کی موجودہ لہر میں مزید بچوں کی ہلاکتوں کا خدشہ ہے، عوامی سماجی حلقوں نے وزیر صحت اور ڈی جی ہیلتھ سے اپیل کی ہے کہ مانسہرہ کے ہسپتالوں میں نمونیا کے علاج معالجہ ، آگاہی اور روک تھام کے لیے ہنگامی اقدامات کیے جائیں۔